Pardes

جیسا بھی تھا دیس میرا
مٹی کی خشبو میں ماں تو تھی

کہتے تھے سب پردیس اچھا
کمی تھی تو کیا، اپنی تو تھی

وہاں کچھ نہ تھا، پر ماں تو تھی
یہاں سب کچھ بھی ہو تو کچھ نہیں

جب نہ یہ در اپنا، نہ زمیں اپنی
گویا کھو گۓ سے ہیں، نہ خبر اپنی

Advertisements